Blog

محبت” اقتباس کشف المجوب”

علی بن عثمان ہجویری

محبت
( از خواجہ محمد یعقوب شاکرؔ )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محبت سے زماں روشن، مکاں آباد ہے ساقی
محبت تو خدا کی نازشِ ایجاد ہے ساقی

کلیدِ کنزِ مخفی، باعثِ تکوینِ عالم بھی
محبت گردشِ افلاک کی بُنیاد ہے ساقی

محبت جذبِ وحدت ہے مگر کثرت کی صورت میں
کبھی مجنوں، کبھی رانجھا، کبھی فرہاد ہے ساقی

محبت وصل کے عالم میں اپنی ذات کھو دینا
دمِ فرقت مگر دل میں تڑپتی یاد ہے ساقی

وجود اِسکا مکاں میں ہو تو پھر بھی لا مکانی ہے
محبت وقت کی ہر قید سے آزاد ہے ساقی

محبت، وحدتِ افکار کی بنیادِ مستحکم
اسی کے دم سے ایوانِ ہوس برباد ہے ساقی

محبت دِیدۂ ایماں کا اِک نورِ بصیرت ہے
یہ ہو دل میں تو کیا اندیشۂ اِلحاد ہے ساقی

یہ دل صحرا ہے، انبوہِ غزالاں خواہشیں میری
محبت گھات میں بیٹھا ہوا صیاد ہے ساقی

Related Articles

Back to top button